یارکشائیر ادبی فورم برطانیہ کے زیر اہتمام ۱۹ واں عالمی طرح مشاعرہ بیاد رحمت الہی برق اعظمی مرحوم

یارکشائیر ادبی فورم برطانیہ کے زیر اہتمام ۱۹ واں عالمی طرح مشاعرہ بیاد رحمت الہی برق اعظمی مرحوم
مصرعہ طرح : ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کون دیکھے گا
یارکشائیر ادبی فورم برطانیہ کے ۱۹ ویں عالمی طرحی مشاعرے کے لئے خالق مصرعہ رحمت الہی برق اعظمی مرحوم کی غزل
رحمت الہی برق اعظمی
پریشاں کرنے والوں کو پریشاں کون دیکھے گا
ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کون دیکھے گا
بجزمیرے یہ دلچسپی کا ساماں کون دیکھے گا
جلا کر دل کے داغوں کو چراغاں کون دیکھے گا
کسے گلشن سے اتنا عشق ہے میری طرح گلچیں
قفس میں رہ کے تصویرِ گلستاں کون دیکھے گا
اُسے رنگیں اِسے صد چاک ہونا چاہئے ورنہ
ترا دامن مرا چاک گریباں کون دیکھے گا
بجائے ساغرِ مے تیرے میخانے میں اے ساقی
چلیں جب بوتلیں ہردم خمستاں کون دیکھے گا
چمن خود باغباں پامال کرتا ہے تو حیرت کیا
چمن تو اس نے دیکھا ہے بیاباں کون دیکھے گا
حکیمِ وقت ہوں میں ہی اگر گلشن سے اُٹھ جاؤں
تو پھر اے باغباں نبضِ بہاراں کون دیکھے گا
بچا کر اس کو رکھا ہے کلیجے میں کہ پھر تجھ کو
جو چشمِ آبلہ پھوٹی پشیماں کون دیکھے گا
دعائیں کیوں نہ دوں ہردم نگاہِ نازِ قاتل کو
جو یہ نشتر نہ ہو سوئے رگِ جاں کون دیکھے گا
غنیمت عصرِ حاضر میں ہے یہ بھی ورنہ اے ہمدم
یہاں برق اعظمی سا پھر سخنداں کون دیکھے گا
رحمت الہی برق اعظمی مرحوم کے مصرعہ طرح پر یارکشائیر ادبی فورم برطانیہ کے ۱۹ ویں عالمی طرحی مشاعرے کے لئے میری طبع آزمائی
احمد علی برقی اعظمی
مرے افسانۂ ہستی کا عنواں کون دیکھے گا
شبِ دیجور میں خواب پریشاں کون دیکھے گا
گلوں کی چاک دامانی کا منظر ہے عیاں سب پر
چمن میں اِن دنوں خارِ مغیلاں کون دیکھے گا
جہانِ رنگ و بو کی زیب و زینت ہم سے قایم ہے
’’ ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کو دیکھے گا‘‘
کی جس کی آبیاری خونِ دل سے عمر بھر ہم نے
’’ ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کون دیکھے گا ‘‘
ادھوری ہے کتاب زندگی جس کے بغیر اپنی
ہماری داستانِ غم کا عنواں کون دیکھے گا
مہ و خورشید سے روشن ہے جس کا چہرۂ زیبا
وہ ہو پیشِ نظر تو ماہ تاباں کون دیکھے گا
دیا ہے باغباں نے جب سے دستورِ زباں بندی
گل و بلبل کو گلشن میں غزلخواں کون دیکھے گا
وہ دے کر دعوت نظارہ پھر واپس نہیں آئے
دریدہ پیرہن جیب و گریباں کون دیکھے گا
یونہی کرتے رہے گر مسخ وہ تاریخ آزادی
ہماری سرخیٔ خونِ شہیداں کون دیکھے گا
جدھر دیکھو ادھر پیشِ نظر ہے خونچکاں منظر
ہماری خانہ بربادی کا ساماں کون دیکھے گا
نہیں ہوتا کبھی شرمندۂ تعبیر جو برقی
ہماری طرح وہ خوابِ پریشاں کون دیکھے گا
غزل
ڈاکٹر محسن فتحپوری لکھنئو انڈیا
غم و آلام کے چہروں کا درماں کون دیکھے گا
خوشی کے پل کی الجھن کو یوں عریاں کون دیکھے گا
سوادِ شام کے ضو پاش روژن کے جھروکوں سے
مری وحشت کو پھر دست و گریباں کون دیکھے گا
یہاں تو رزمگاہِ زیست سے ہر کوٸ الجھا   ھے
اے خودداری ! ترے اس خوں کو ارزاں کون دیکھے گا
کٸ افعیٰ مری رگ رگ سے لپٹے اب بھی زندہ ھیں
کہ چندن بن کی خوشبو کو پریشاں کون دیکھے گا
رھینِ منّتِ گردش ھوں تیرا ! آتشِ پنہاں
ستمہاۓ زمانہ، سوزِدوراں کون دیکھے گا
ہو ششدر آٸنہ، دیکھے خراشیں جب بھی چہرے پر
ھنر کی ایسی نقّاشی بھی جاناں کون دیکھے گا
سماعت کی گھٹن بھی شاق گذرے ھے شبِ ہجراں
کہ صبحِ نو کی آمد پا بجولاں کون دیکھے گا
یہاں ذوقِ نظر پر منحصر ھے شوقِ دیدہ ور
ھمارے بعد یہ رنگ گلستاں کون دیکھے گا
طلوعِ صبحِ تاباں کا وہ عنواں کون دیکھے گا
یوں شبنم کو گلستاں میں زر افشاں کون دیکھے گا
سنہری یاد کے چتون فسوں بن کر ھیں پھر ابھرے
کہ چھن چھن کرتے کنگن کوہراساں کون دیکھے گا
یہ کس شہرِانا کے ساکنان غم کی ھے وحشت
غبارِ دشت ویراں کو پریشاں کون دیکھے گا
غزالانِ سراسیمہ نکل آۓ ہیں صحرا سے
کہ اب شہرِغزالاں  کوگریزاں کون دیکھے گا
اگر رعناٸِ رعنا نقابِ رخ پلٹ دے گی
دلِ مضطر ترا یہ سوزِ ہیجاں کون دیکھے گا
ھماری قدر کر لو اے چمن والو ،نہیں تو پھر
ھمارے بعد یہ رنگ گلستاں کون دیکھے گا
اگر وحشت مری محسن نہ زندہ رہ سکی تو پھر
غنیمِ جاں تجھے پھر چاکداماں کون دیکھے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محسن فتحپوری لکھنٶ۔۔انڈیا
غزل نمبر ۷
تِرے جانے پہ لوگوں کو پریشاں کون دیکھے گا
گلی بازار ہوں گے اتنے ویراں، کون دیکھے گا
سوالی ہوں تمہارے حسن کی خیرات کا میں بھی
بھرے بازار میں یہ خالی داماں کون دیکھے گا
مریضِ عشق کی حالت سنبھلنے میں نہیں آتی
اُسے یوں دل گِرفتہ اور سوزاں کون دیکھے گا
لگا کے کب سے میں امید بیٹھا ہوں ترے در پر
مِرا زخمی جگر اور اُس کا درماں کون دیکھے گا
تِری محفل میں ہم جیسے اگر مجنوں نہیں ہوں گے
تو پھر دلبر تِرے ماتھے پہ افشاں کون دیکھے گا
تَمنّا ہے سرِ مقتل تمہاری دید ہو جائے
ہمیں زِنداں میں جاناں پا بہ جُولاں کون دیکھے گا
ہمیں اعجاز روز و شب یہی اک فکر رہتی ہے
"ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کون دیکھے گا"
اعجاز قریشی
غزل نمبر ۸
پریشاں، دل فگاراں، شامِ ہجراں کون دیکھے گا
مِرے چہرے پہ رنج و غم کے عُنواں کون دیکھے گا
چمک آنکھوں کی تیری چھین لے گی سب کی بینائی
تری آنکھیں جو ہیں مثلِ غزالاں کون دیکھے گا
تجھے وہ کیسے بھولیں گے جنہیں ہے آرزو تیری
بھلے حاکم کا ہو کوئی بھی فرماں، کون دیکھے گا
اگر اولاد نافرمان ہو جائے کسی گھر میں
تو بوڑھے باپ کے چہرے کی جھریاں کون دیکھے گا
نہ گزرے غم کبھی چھو کر تجھے میری دعا یہ ہے
تجھے روتے ہوئے اور سوگواراں کون دیکھے گا
پلاتا اِس طرح تُو ہے کہ سب غم بھول جاتے ہیں
بھلا اب اور کوئی مے فروشاں کون دیکھے گا
بھرم اعجاز لوگوں کا کبھی توڑا نہیں ہم نے
"ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کون دیکھے گا"
اعجاز قریشی
غزل نمبر ۸
پریشاں، دل فگاراں، شامِ ہجراں کون دیکھے گا
مِرے چہرے پہ رنج و غم کے عُنواں کون دیکھے گا
چمک آنکھوں کی تیری چھین لے گی سب کی بینائی
تری آنکھیں جو ہیں مثلِ غزالاں کون دیکھے گا
تجھے وہ کیسے بھولیں گے جنہیں ہے آرزو تیری
بھلے حاکم کا ہو کوئی بھی فرماں، کون دیکھے گا
اگر اولاد نافرمان ہو جائے کسی گھر میں
تو بوڑھے باپ کے چہرے کی جھریاں کون دیکھے گا
نہ گزرے غم کبھی چھو کر تجھے میری دعا یہ ہے
تجھے روتے ہوئے اور سوگواراں کون دیکھے گا
پلاتا اِس طرح تُو ہے کہ سب غم بھول جاتے ہیں
بھلا اب اور کوئی مے فروشاں کون دیکھے گا
بھرم اعجاز لوگوں کا کبھی توڑا نہیں ہم نے
"ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کون دیکھے گا"
اعجاز قریشی
غزل نمبر ۹
بہاروں کے نظارے، ابر و باراں کون دیکھے گا
"ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کون دیکھے گا"
مقفل کر دیا ہے میکدہ ساقی نے جانے کیوں
ہیں تشنہ لب ابھی تک مے گساراں کون دیکھے گا
وہ ظالم اور فتنہ گر اگر پہلو میں بیٹھا ہو
تو اِن لمحات میں پھر سوئے یزداں کون دیکھے گا
رہیں محفوظ سارے کھیت، طوفاں اور بارش سے
وگرنہ گاؤں کے مایوس دہقاں کون دیکھے گا
سناتے ہیں سبھی آ کر غمِ ہستی کے افسانے
نہ ہوں گے ہم اگر تو بزمِ یاراں کون دیکھے گا
نہ ہو جن کو خبر اپنی، رہیں مدہوش جو ہر دم
تو ایسے میکشوں کے عہد و پیماں کون دیکھے گا
نہ ہو گا وہ اگر جلوہ نما اعجاز محفل میں
تو پھر اپنا یہ اندازِ غلاماں کون دیکھے گا
اعجاز قریشی
غزل نمبر ۱۰
وہ میرا بن گیا ہے دُشمنِ جاں کون دیکھے گا
یہ میری بے قراری، چشمِ گریاں کون دیکھے گا
ہیں دیواروں پہ میرا نام چسپاں کون دیکھے گا
مِری بربادیوں کا ساز و ساماں کون دیکھے گا
گُلوں کا رقص اور سروِ خراماں کون دیکھے گا
"ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کون دیکھے گا"
جَلا کر کشتیاں اپنی جو آئے ہیں سفینے میں
سمندر میں اٹھے اب جو بھی طوفاں کون دیکھے گا
بڑی حسرت بھری نظروں سے ہم کو دیکھتے ہیں وہ
پرندوں کو قفس میں یوں ہراساں کون دیکھے گا
صداقت کی امانت کی ہمیشہ بات کی میں نے
نہ جانے کیوں ہے دنیا مجھ سے نالاں کون دیکھے گا
سبھی اعجاز میرے یار مجھ سے دور رہتے ہیں
مِری ہستی کے اوراقِ پریشاں کون دیکھے گا
اعجاز قریشی
غزل نمبر ۱۱
مِرا شوقِ تمنا بزمِ جاناں کون دیکھے گا
سجا رکھی ہیں جو پھولوں کی لڑیاں کون دیکھے گا
سُنے گا کون چہکاریں چمن میں عندلیبوں کی
"ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کون دیکھے گا"
جو جل جاتے ہیں پروانے انہیں تو دیکھتے ہیں سب
جلے گی کب تلک شمعِ فروزاں کون دیکھے گا
صراحی ہے نہ ساغر ہے پریشاں ہے بہت ساقی
یہ سناٹے یہ ویرانی یہ شاماں کون دیکھے گا
محبت کی حدوں کی انتہا اب اور کیا ہو گی
پہن کر بیڑیاں جب ہوں گے رقصاں کون دیکھے گا
لگائیں بولیاں اِس کی سرِ بازار لوگوں نے
محبت اتنی ہو جائے گی ارزاں کون دیکھے گا
قسم اعجاز اس نے بھی اٹھائی ہے نہ آنے کی
بُجھا دو سب دیے اب یہ چراغاں کون دیکھے گا
اعجاز قریشی
وہ ابرُو ، مردُمک ، وہ نوکِ مِژگاں کون دیکھےگا
اِلٰہی خیر! اُن کی چشمِ فتّاں کَون دیکھےگا
ہمیں بھی ہے وہی اندیشہ جو تھا میرو غالِب کو
"ہمارے بعد یہ رنگِ گُلِستاں کَون دیکھےگا"
جو بَر آئ تمنّا وہ سبھی نے دیکھ لی، لیکِن
ادھورے رہ گَئے دِل میں جو ارماں ، کَون دیکھےگا
یہ کہہ کر اب مُعمّر کھیلتے ہیں ساتھ بچّوں کے
بتاؤ، پِھر سے اِس دُنِیا کو خنداں کَون دیکھےگا
اگر اُس پار ہوں مُشتاق دِلبر کی کُھلی بانہیں
تو صدِّ وُسعتِ دشت و بیاباں کَون دیکھےگا
پرستِش حُسن کی پیوست ہے اِنساں کی فِطرت میں
بھلا مُنہ پھیر کر گُلشن سے ویراں کَون دیکھےگا
جِلاوطنی مِری ہے عُمربھر کی قید سے بہتر
مُسلسل روزوشب دیوارِ زِنداں کَون دیکھےگا
وہاں تسنیم و کوثر کا میں جب دیدار پاؤں گا
یہاں میری نظر سے تب خُمِستاں کَون دیکھےگا
کِتابوں میں اگر تصویر گُم ہو تو کَوئ ڈھُونڈے
غُبار آلود اپنا طاقِ نِسیاں کَون دیکھےگا
اھمّیّت تو مَے کی ہے، قرابہ چاہے جَیسا ہو
مناظر ہوں اگر جاذب تو عُنواں کَون دیکھےگا
جو صُورت سےعیاں ہے "شاذ” ، مانےگی وہی دُنِیا
نِہاں باطِن میں ہو غوغاے طُوفاں ، کَون دیکھےگا
آلوک کمار شریواستو
حکومت میں سبھی ہیں اب پریشاں کون دیکھے گا
زباں خرچی ہے یہ اس کی نگہباں کون دیکھے گا  🌹🌹
نہ آئے ہوش میں تو کل کہیں پچھتاوء گے تم سب
نہ ہونے پر ہمارے تم کو حیراں کون دیکھے گا 🌹🌹
کرو رشتہ جو دینٍ حق کو اپنائے دلو جاں سے
عمل سے چمکے تو اسمٍ نسیماں کون دیکھے گا 🌹🌹
یہ جس کو دیکھ نا ہے دیکھ لے میری بلا سے اب
ہمارے بعد یہ رنگ گلستاں کون  دیکھے گا 🌹🌹
مکٌمل یہ جہاں بھی مل اگر جائے خسارہ ہے
نہ ہو رسوا گیا تیرا تو ایماں کون دیکھے گا 🌹🌹
ڈرو رب سے خبر ہے اس کو ہر پل کی مرے ہمدم
سوا اس کے نہیں کوئ رگٍجاں کون دیکھے گا 🌹🌹
امیرٍ شہر گہری نیند کی بیماری میں ہوگا
نہیں فرصت اسے حالٍ غریباں کون دیکھے گا 🌹🌹
یہ تو ہے دورٍ خود غرضی سنبھل کر چل سخا توبھی
کہاں بیچی حیا فعلٍ کریماں  کون دیکھے گا 🌹🌹
طارق سخا لکھنوی
۔۔۔۔۔۔۔طرحی غزل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
طرح ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
"ہمارے بعد یہ رنگ گلستاں کون دیکھے گا"
۔۔۔۔۔۔‌۔۔۔۔۔‌۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خزاں کے خوف سے ہر گل پریشاں کون دیکھے گا
ہمارے بعد یہ رنگ گلستاں کون دیکھے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‌۔‌۔۔۔‌‌۔‌۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‌۔۔
یہ کیسی افراتفری میں ہے انساں کون دیکھے گا
ہراساں ہیں سبھی مجھ کو ہراساں کون دیکھے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔‌‌۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‌‌۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گزرتے ہیں نگاہوں کوچراکر یہ جہاں والے
بجز تیرے مرا حال پریشاں کون دیکھے گا
۔۔۔۔۔۔۔‌۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مسرت آشنا بستی کے لوگوں میں یہ الجھن ہے
مرے چہرے پہ رنج وغم کے عنواں کون دیکھے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‌۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‌۔‌‌۔۔
ہماری انگلیاں خاروں کو چھونے سے ہوئیں زخمی
ہرے پتوں سے اب شاخوں کو عریاں کون دیکھے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حسد آمیز نظروں کا تعاقب جان لیوا ہے
تمہارے قرب سے اب دل ہے نازاں،کون دیکھے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمنا،آرزو،حسرت لئے پھرتے ہیں سب اپنی
مرے دل میں جو پنہاں ہیں وہ ارماں کون دیکھے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‌
سبھی کوڈال کر حیرت میں اپنے حسن زیبا سے
مقابل آئینے کے خود کو حیراں کون دیکھے گا گی
‌۔‌۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔‌۔
عداوت،رنجشیں،نفرت جہاں والو! مٹا ڈالو
تباہی کے یہ ساماں ہیں یہ ساماں کون دیکھے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عبدالحق سحر مظفر نگری
24/4سروٹ گیٹ،نزد چندرا ٹاکیز ضلع مظفر نگر یو،پی انڈیا
پن کوڈ‌۔251001
19ویں طرحی مشاعرے میں میری پہلی کاوش
نہیں ہے تُو  اگر اے جانِ جاناں، کون دیکھے گا
بجز تیرے مرا یہ دل فگاراں کون دیکھے گا
تمہارے بعد یہ لیل و نہاراں کون دیکھے گا
ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کون دیکھے گا
تمہارے نام سے وابستہ ہے حسنِ گلستاں سب
تمہارے بعد، یہ حسنِ بہاراں کون دیکھے گا
ہم اپنے قتل کا الزام لے لیں گے خود اپنے سر
سرِ محشر رُخِ زیبا پشیماں کون دیکھے گا
تجھے دیکھیں گے چارہ گر کسے پھر اور دیکھیں گے
ترے ہوتے مرا چاکِ گریباں کون دیکھے گا
تری رسوائی کے ڈر سے لبوں کو سی لیا ہم نے
سرِ محفل تجھے مضطر،  پریشاں کون دیکھے گا
جلاتے ہو بھلا کس واسطے ویران بستی میں
یہاں کوئی نہیں شمعِ فروزاں کون دیکھے گا
ترے حسنِ فسوں گر کے سحر میں ڈوب کر زاہدؔ
مری جانب تری نظروں کے پیکاں کون دیکھے گا
مسعود سلیم زاہد گلاسگو
رواں طرحی مشاعرے میں میری دوسری کاوش
ترے حسنِ شبستاں کو یوں ویراں کون دیکھے گا
ترے شانوں پہ یہ زلفِ پریشاں کون دیکھے گا
 تمہارے دم سے ہیں یہ زندگی کی رونقیں ساری
تمہارے بعد یہ صبحِ بہاراں کون دیکھے گا
 اٹھا رکھا ہے جو لہروں نے سینے پر سمندر میں
کنارے پر کھڑے ہو کر وہ طوفاں کون دیکھے گا
قفس میں ڈال کر ہم کو خبر دی ہے بہاروں کی
بتا صیّاد اب جشنِ بہاراں کون دیکھے گا
 ہمارے خون سے شاداب ہے ہر شاخ گلشن کی
"ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کون دیکھے گا"
 جہاں اہلِ چمن نے نوچ ڈالے برگِ گل خود ہی
وہاں گلچیں سے گلشن پھر ہراساں کون دیکھے گا
 مکیں اس شہر کے مانوس ہیں جب تیرگی سے پھر
اندھیروں سے گلہ کس کو چراغاں کون دیکھے گا
 مزے لے کر جہاں والے کتابِ زیست سے میری
پڑھیں گے داستاں میری پہ عنواں کون دیکھے گا
کرے گا تو نہ گر بخیہ گری  اے بخیہ گر میرے
مری یہ آستیں،  یہ جیب و داماں کون دیکھے گا
گریزاں گر رہے زاہدؔ یونہی  مجھ سے خفا ہو کر
مرے گھر کے در و دیوار ویراں کون دیکھے گا
مسعود سلیم زاہدؔ گلاسگو
غزل نمبر 3
سرِ محشر سبھی ہوں گے پریشاں، کون دیکھے گا
ہمارے خون سے تر تیرا داماں کون دیکھے گا
صراحی، مے و مینا اور حریمِ ناز پہلو میں
سرِ میخانہ اب واعظ کا ایماں کون دیکھے گا
ہمیں نے آبیاری کی ہے گلشن میں ہر اک گل کی
"ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کون دیکھے گا "
خدا کے واسطے کہہ دو اگر کوئی شکایت ہے
تمہیں مجھ سے وگرنہ یو ں گریزاں کون دیکھے گا
لگے ہیں عندلیبِ خوش نوا پر پہرے گلشن میں
مغنّی کون دیکھے گا غزل خواں کون دیکھے گا
قدم رنجہ کوئی فرمائے گا ویران گھر میں کیوں
مکیں نہ ہوں کہیں جس گھر میں ساماں کون دیکھے گا
شمار آسان ہے کرنا بہت  ہی، عیب غیروں کے
چھپا خود اپنے اندر ایک شیطاں کون دیکھے گا
حریص و مطلبی دنیا میں ممکن ہی نہیں زاہدؔ
غرض سے پاک کوئی ایسا انساں کون دیکھے گا
مسعود سلیم زاہدؔ گلاسگو
اور غزل نمبر 4
کسے فرصت مرا خانہءِ ویراں کون دیکھے گا
خیاباں چھوڑ کر دشت و بیاباں کون دیکھے گا
جلا ڈالا چمن کو باغباں نے اپنے ہاتھوں سے
عنادل، تتلیاں اب محوِ رقصاں کون دیکھے گا
ہمی سے ہے یہ تنویرِ بہاراں اے چمن والو
"ہمارے بعد یہ رنگِ گلستاں کون دیکھے گا "
پسِ مردن مرا لاشہ بہا دینا سمندر میں
لحد کس واسطے، گورِ غریباں کون دیکھے گا
لگی ہے بزم میں جب سے لبِ اظہار پر قدغن
جگر کے داغ اور یہ سوزِ ہجراں کون دیکھے گا
 لہو سے لکھ رہا ہوں میں حکایاتِ غمِ ہستی
مگر اس داستاں میں دردِ پنہاں کون دیکھے گا
تری چشمِ فسوں گر کے اثر میں ہیں جہاں والے
تری زلفِ خمیدہ کو پریشاں کون دیکھے گا
کیا ہے در بدر تقدير نے چھوٹا ہے اپنا گھر
وطن کی وہ فِضائیں، مرغزاراں کون دیکھے گا
قسم تو ترکِ مے نوشی کی ہے مانا مگر زاہدؔ
سبو ہو، ابر و باراں ہو تو پیماں کون دیکھے گا
مسعود سلیم زاہدؔ گلاسگو
طرحی غزل
مصرع طرح:
ہمارے بعد یہ رنگِ  گلستاں کون دیکھے گا
خورشید صِدّیقی
نہ ہم ہونگے تو یہ جشنِ  بہاراں کون دیکھے گا
ہمارے بعد یہ رنگِ  گلستاں کون دیکھے گا
یہ مستانی  فضا  یہ  ابرِ باراں  کون  دیکھے  گا 
حسینانِ چمن کو گل بد اماں  کون  دیکھے   گا
سرور و کیف اورمستی کا ساماں کون دیکھے گا
گلوں کو نت نئے رنگوں میں خنداں کون دیکھے گا
مہکتے عارض و زلفِ پریشاں کون دیکھے گا
چھلکتے جام، سرشارئِ  جاناں کون دیکھے گا
ہوئے وہ جلوہ گر تو مہرِ  تاباں کون دیکھے گا
شباب وحسن کومحفل میں رقصاں کون دیکھے گا
کسی کی جستجو میں اُن کو حیراں کون دیکھے گا
وہ اپنی بے رُخی پر ہوں پشیماں ،کون دیکھے گا
بھری محفل انہیں کےحسن سےمسحورکُن  ہو گی
فراقِ یار میں ان کو پریشاں کون دیکھے گا
کوئی جب یاد آئے گا تو آنکھیں شبنمی ہوں گی
مگر وہ  قطرہ ہائے نوکِ مژگاں کون  دیکھے  گا
چمن میں چاروں جانب شادمانی کا چلن ہو گا
مگر بستی کی  وہ شامِ  غریباں کون   دیکھے  گا
امیرِ شہر  کا  ہے حکم، گھر  میں  بند  ہو  جاؤ
کوئی  بتلاؤ،  حالِ فاقہ زدگاں  کون  دیکھے  گا
سبھی نے آسماں  پر  ایک  تارا ٹوٹتے  دیکھا
زمیں پر کتنے دل ہیں خانہ ویراں کون دیکھے گا
عروسِ شب ہوئی بیدار، چھٹکی چاندنی ہر سو
بھلا اب  چہرۂِ  خورشیدِ تاباں کون   دیکھے  گا
گلوں کے خون سے رنگیں  گلستاں کون دیکھے گا
مرے کشمیرمیں جشن-بہاراں   کون   دیکھے   گا
نہ جانے کتنے ہی احباب کی یادوں کا مدفن ہے
ہمارے سینے میں شہر-خموشاں کون دیکھے گا
گلستاں میں لہو سے اپنے ہر گل کو نکھاریں گے
ہوا اور باغباں کے عہد و پیماں کون دیکھے گا  ؟؟
سبھی مصروف ہیں اپنے مسائل اور مصائب میں
سر-بازار میرا دل پریشاں ،کون دیکھے گا ؟
یہی حسرت زمانے سے ہمیں جانے  نہیں دیتی
ہمارے بعد یہ  رنگ-گلستاں کون   دیکھے گا !
قبور-اغنیاپر پھول ہیں اور فاتحہ خوانی
مگر عابد سوئے گور-غریباں کون دیکھے گا
عابد علی خاکسار
غزل
ابن عظیم فاطمی
نہیں گزرا جو دن مہرِ درخشاں کون دیکھےگا
نہ آئی شب تو کوئی خوابِ امکاں کون دیکھے گا
عجب اک خوف سا رہنے لگا ہے ہر گھڑی ہم کو
ہمارے بعد یہ رنگ گلستاں کون دیکھے گا"
دعائیں خیر کی ہم صدق دل سے یوں بھی کرتے ہیں
بھلا سوچو کہ پھر حالِ پریشاں کون دیکھے گا
ہم ان کے جذبِ صادق پر اٹھاکر انگلیاں خوش ہیں
مسیحا جب نہ ہوں گے ہم کو جاناں کون دیکھے گا
متاع درد کوٸ کس لیے لینے چلا آۓ
ترا حالِ دگرگوں چشمِ حیراں کون دیکھے گا
خیال و خواب کی دنیا سے باہر کیوں نہیں آتے
بتاؤمفلسو یہ جیب و داماں کون دیکھے گا
تمہاری مشکلیں کس نے کہا مشکل نہیں ہیں یہ
سبھی مشکل کے عادی ہیں تو آساں کون دیکھے گا
عظیمِ بے خبر منزل تو خود چل کر نہیں آتی
پڑے ہو گھر میں تم دشت و بیاباں کون دیکھے گا
یارکشائیر ادبی فورم برطانیہ کی برق اور برقی نوازی پر فی البدیہہ اظہار امتنان و تشکر
احمد علی برقی اعظمی
یارکشائیر ادبی فورم کا مرے والد سے پیار
اس کی اس بزم سخن سے ہورہا ہے آشکار
میرے والد برق تھے اور میں ہوں برقی اعظمی
میرا یہ برقی تخلص ہے اسی سے مستعار
ہے سبھی احباب کی معیاری غزلوں سے عیاں
ایک سے اک بڑھ کےہیں اس بزم میں تخلیق کار
بخش کر عہدہ صدارت کا مجھے  اس بزم نے
میرے جیسے طفل مکتب کا بڑھایا ہے وقار
محفل شعروسخن میں میں ابھی ہوں مبتدی
اس نوازش کے لٸے ممنوں ہے یہ خاکسار
میرے والد کا ہے روحانی تصرف میرا فن
ان پہ نازل ہو ہمیشہ رحمت پروردگار
یارکشائیر کی ہیں فال نیک بزم آراٸیاں
ہے دیار  غیر میں اردو کی جو خدمتگذار
ہیں مظفر آج جو اس بزم کی روح رواں
شہر لندن میں ہیں برقی کے وہ اک نادیدہ یار
ان کی ہے برقی نوازی باعث عزشرف
دے جزائے خیر انھیں اس کے لٸے پروردگار



Leave a Reply