’’ کس سے پوچھوں ترا نشاں جاناں‘‘ نذر جون ایلیا : احمد علی برقی اعظمی ۔۔ بشکریہ ناظم ایک زمین کئی شاعر

ایک زمین کئی شاعر
جون ایلیا اور احمد علی برقی اعظمی
جون ایلیا
ہم کہاں اور تم کہاں جاناں
ہیں کئی ہجر درمیاں جاناں
رائیگاں وصل میں بھی وقت ہوا
پر ہوا خوب رائیگاں جاناں
میرے اندر ہی تو کہیں غم ہے
کس سے پوچھوں ترا نشاں جاناں
عالم بیکران رنگ ہے تو
تجھ میں ٹھہروں کہاں کہاں جاناں
میں ہواؤں سے کیسے پیش آؤں
یہی موسم ہے کیا وہاں جاناں
روشنی بھر گئی نگاہوں میں
ہو گئے خواب بے اماں جاناں
درد مندان کوۓ دل داری
گئے غارت جہاں تہاں جاناں
اب بھی جھیلوں میں عکس پڑتے ہیں
اب بھی نیلا ہے آسماں جاناں
ہے جو پرکھوں تمہارا عکس خیال
زخم آئے کہاں کہاں جاناں
احمد علی برقی اعظمی
کچھ بتا ہے کدھر نہاں جاناں
’’ کس سے پوچھوں ترا نشاں جاناں‘‘
راس آئیں گے کب مجھے آخر
یہ زمیں اور آسماں جاناں
کب تو سمجھے گا میراحالِ زبوں
تو تو ہے میرا ہم زباں جاناں
کیا تجھے یاد ہیں وہ دن جب تھا
تو حسیں اور میں جواں جاناں
ہے یہ سوہانِ روح میرے لئے
کیوں ہے تو مجھ سے بدگماں جاناں
اب ہیں خواب وخیال وہ شب و روز
جب ملاتے تھے ہاں میں ہاں جاناں
کیسی راز و نیاز کی باتیں
ہوتی تھیں اپنے درمیاں جاناں
اب وہی میں ہوں اور وہی تو ہے
منھ چڑھاتی ہے کہکشاں جاناں
بول سکتا ہوں میں بھی تیرے حضور
میرے منھ میں بھی ہے زباں جاناں
تھا تو اپنی رگِ گلو کے قریب
تجھ کو ڈھونڈا کہاں کہاں جاناں
کب سے برقی ہے تیرا چشم براہ
ہوگا کب اُس پہ مہرباں جاناں

:

Leave a Reply