ڈھل جاتی ہے جو پھر وہ جوانی نہیں ملتی : احمد علی برقی اعظمی

Leave a Reply