میں رودادِ دلِ مضطر سنا دوں پھر چلے جانا : احمد علی برقی اعظمی

Leave a Reply