ایک زمین کئی شاعر اعلیٰ حضرت احمد رضا خان بریلوی اور احمد علی برقی اعظمی : بشکریہ ناظم ایک زمین کئی شاعر، ایک اور انیک اور اردو کلاسک ادبی گروپ

ایک زمین کئی شاعر
اعلیٰ حضرت احمد رضا خان  بریلوی اور احمد علی برقی اعظمی
نعت : اعلٰحضرت احمد رضا خان بریلوی
سرور کہوں کہ مالک و مولیٰ کہوں تجھے
باغِ خلیل کا گل زیبا کہوں تجھے

حرماں نصیب ہوں تجھے اُمید گہ کہوں
جانِ مراد و کانِ تمنا کہوں تجھے

گلزارِ قدس کا گل رنگیں ادا کہوں
درمانِ درد، بلبل شیدا کہوں تجھے

صبح وطن پہ شامِ غریباں کو دُوں شرف
بیکس نواز گیسوئوں والا کہوں تجھے

اللہ رے تیرے جسم منور کی تابشیں
اے جانِ جاں میں جانِ تجلا کہوں تجھے

بے داغ لالہ یا قمر بے کلف کہوں
بے خار گلبنِ چمن آراء کہوں تجھے

مجرم ہوں اپنے عفو کا ساماں کروں شہا
یعنی شفیع روزِ جزا کا کہوں تجھے

اس مردہ دل کو مژدہ حیات ابد کا دوں
تاب و توانِ جانِ مسیحا کہوں تجھے

تیرے تو وصف عیب تناہی سے ہیں بری
حیراں ہوں میرے شاہ میں کیا کیا کہوں تجھے

کہہ لے کی سب کچھ انکے ثناء خواں کی خامشی
چپ ہو رہا ہے کہہ کہ میں کیا کیا کہوں تجھے

لیکن رِضا نے ختم سخن اس پہ کر دیا
خالق کا بندہ خلق کا آقا کہوں تجھے

نعت سرورِ کائنات فخر موجودات احمد مجتبیٰ حضرت محمد مصطفیٰ ﷺ 
احمد علی برقی اعظمی
یٰسین یا مزمل و طٰہ کہوں تجھے
اے پیکرِ جمال میں کیا کیا کیا کہوں تجھے
معراج کا شرف ہے تجھے اس لئے نہ کیوں
مسند نشینِ عرشِ معلیٰ کہوں تجھے
گلزار دینِ حق کا گُلِ سَرسَبَد ہے تو
’’ باغِ خلیل کا گُلِ زیبا کہوں تجھے ‘‘
وجہہِ وجود عالمِ امکاں ہے تیری ذات
پھر کیوں نہ اس کا انجمن آرا کہوں تجھے
بعد از خدا توہی ہے فقط سب کا چارہ ساز
مسیکن و بیکسوں کا سہارا کہوں تجھے
خیر البشر نہیں ہے کوئی جب ترے سوا
پھر کیوں نہ سب سے ارفع و اعلیٰ کہوں تجھے
برقی کی صرف تجھ پہ شفاعت ہے مُنحَصِر
اپنا نہ کیوں نجات دہندہ کہوں تجھے

Leave a Reply