اب تک وہیں کھڑے ہیں چلے تھے جہاں سے ہم : احمد علی برقی اعظمی

Leave a Reply